Friday, June 21, 2024
کھیلانڈر 19 ورلڈ کپ 2024 کے لیے 16 ٹیموں کے کپتانوں کا...

انڈر 19 ورلڈ کپ 2024 کے لیے 16 ٹیموں کے کپتانوں کا اظہار خیال

آئی سی سی مینز انڈر 19 کرکٹ ورلڈ کپ کا 15 واں ایڈیشن بالکل قریب ہے، ٹورنامنٹ 19 جنوری سے شروع ہونے والا ہے۔جس کا فائنل 11 فروری کھیلا جائے گا ۔ تمام ٹیموں کو چار چار گروپس میں تقسیم کیا گیا ہے۔ گروپ اے میں بنگلہ دیش، بھارت، آئرلینڈ اور امریکہ جبکہ گروپ بی میں انگلینڈ، سکاٹ لینڈ، جنوبی افریقہ اور ویسٹ انڈیز شامل ہیں۔
گروپ سی میں آسٹریلیا، نمیبیا، سری لنکا اور زمبابوے جبکہ گروپ ڈی میں افغانستان، نیپال، نیوزی لینڈ اور پاکستان شامل ہیں۔
ٹورنامنٹ نئے فارمیٹ میں کھیلا جائے گا جہاں ہر گروپ سے تین ٹیمیں نئے سپر سکس مرحلے میں داخل ہوں گی – 12 ٹیموں کو سیمی فائنلسٹ کا تعین کرنے کے لیے چھ کے دو گروپس میں تقسیم کیا جائے گا۔
ٹیمیں پہلے ہی وارم اپ میچوں کا پہلا راؤنڈ کھیل کر مرکزی ایونٹ کے لیے تیاری کر رہی ہیں۔
2024 U19 ورلڈ کپ سے پہلے، تمام 16 ٹیموں کے کپتانوں نے ٹورنامنٹ سے پہلے کے فوٹو شوٹ کراوایا اور آنے والے چیلنجز کے بارے میں اپنے خیالات کا ااظہار کیا:۔
جنوبی افریقہ کے کپتان جوآن جیمز نے کہا کہ “حقیقت یہ ہے کہ ہم مشکل حالات میں کبھی ہار نہیں مانتے۔ ایسے( مواقع )لاتعداد بار آئے ہیں جب ہم مشکل حالات سے گزرے ہیں لیکن ہم نے لچک دکھائی اور آگے بڑھایا۔”
پاکستانی کپتان سعد بیگ ہر طرح سے آگے بڑھنا چاہتے ہیں انہوں نے کہا کہ : “ایک ٹیم کے طور پر، ہم انڈر 19 ورلڈ کپ جیتنا چاہیں گے۔ ہم اچھی پرفارمنس دینے کی پوری کوشش کریں گے۔ ہم ہر میچ میں پوری کوشش کریں گے، جیسا کہ ہم نے ورلڈ کپ کی تیاری میں کیا تھا۔
انگلینڈ کے کپتان بین میک کینی تیاری سے خوش ہیں انہوں نے اپنے جذبات کا اظہار کچھ یوں کیا : “ذاتی طور پر، میں ٹورنامنٹ میں جانے کے لیے پر اعتماد محسوس کر رہا ہوں۔ میں نے وارم اپ گیم میں بہت اچھا کھیلا اور ہندوستان میں ہماری سیریز اچھی رہی۔ لڑکے بالکل ایسے ہی ہیں، ہم نے ورلڈ کپ میں خاص طور پر بھارت میں ہونے والی سیریز کو لے کر اعتماد میں لیا ہے۔ جو کچھ کیا گیا اس سے واقعی خوش ہوں۔
بنگلہ دیش کے کپتان محفوظ الرحمن ربی نے ہندوستان کے خلاف بڑے کھیل پر کہا: “ہم اسے ایک عام کھیل کی طرح کھیلیں گے۔ ہم نے ٹورنامنٹ کے لیے اچھی تیاری کی ہے۔ ہمیں اپنے کوچ کی طرف سے بہت اچھا ان پٹ ملا ہے، اس لیے ہم ہندوستان کے خلاف ٹورنامنٹ میں جیت کا آغاز کرنے کی کوشش کریں گے۔‘‘
سری لنکا کے کپتان سینتھ جے وردھنےنے کہا کہ : “میں ایم ایس دھونی کی طرح بننا چاہوں گا۔ وہ میرا آئیڈیل ہے۔ میں اس کی طرح ٹھنڈا بننا چاہتا ہوں۔ جس طرح وہ ٹیم کو سنبھالتا ہے، اس کی فیصلہ سازی – اس کے بارے میں سب کچھ حیرت انگیز ہے۔
آئرلینڈ کے کپتان فلپ لی روکس ورلڈ کپ کے لیے بہت پر جوش ہیں ،انہوں نے اپنے خیالات کا اظہار کچھ یوں کیا ” ہم اتنے عرصے سے گھر کے اندر تربیت کر رہے ہیں۔ جب سے ہمیں شیڈول کا علم ہوا ہم امریکہ کے خلاف پہلے کھیل کے منتظر ہیں۔ میدان مین اترنے کا منتظر ہوں ۔‘‘
زمبابوے کے کپتان میتھیو شونکن “ایک ٹیم کے طور پر، اس ورلڈ کپ میں، ہماری اہم طاقت یہ ہے کہ ہم بہت گہری بیٹنگ کرتے ہیں اور ہمارے پاس گیند بازوں کی وسیع اقسام ہیں۔ ہمارے پاس بائیں ہاتھ کے اسپنرز، آف اسپنرز، لیگ اسپنرز ہیں اور ہمارا سیون اٹیک بھی کافی مہذب ہے۔
یو ایس اے کے کپتان رشی رمیش نے قائدانہ انداز کا موازنہ ہندوستانی اسٹار سے کیا: “میں اپنے ساتھیوں کے ساتھ پرسکون، ٹھنڈا اور دوستانہ رہنا پسند کرتا ہوں۔ لیکن جب مخالف ٹیم کی کوئی وکٹ گرتی ہے تو یہ ایک طرح سے ہنگامہ خیز ہو جاتا ہے۔ میں ویرات کوہلی کی طرح کچھ بے رحمی کے ساتھ جشن منانا پسند کرتا ہوں۔ تو اس میں سے کچھ دیکھنے کی توقع کر سکتے ہیں۔”

ویسٹ انڈیز کے کپتان اسٹیفن پاسکل نے کہا ” ۔ ویسٹ انڈیز کی ٹیموں میں گزشتہ برسوں میں اتحاد ، مزاج اور شدت خوبی رہی ہے اور یہ اس یونٹ کے ساتھ مختلف نہیں ہے۔ جب بھی ہم باہر جاتے ہیں تو یکجہتی اور شدت دکھائی دیتی ہے۔”
آسٹریلیا کے کپتان ہیو ویبگن اس بارے میں کہ وہ کیا حاصل کرنا چاہتے ہیں: “ظاہر ہے، آخری مقصد ٹورنامنٹ جیتنا ہے لیکن بہتر بلوکس اور بہتر کرکٹرز کے طور پر سامنے آنا بہت اچھا ہوگا۔
نمیبیا کے کپتان الیکس وولشینک کا پہلے کھیل سے پہلے احساسات کچھ یوں ہیں : “ایک ہی وقت میں بہت پرجوش اور بہت گھبرایا ہوا ہوں ۔ بہت ساری چیزیں ہیں جو اس میں جاتی ہیں، بہت ساری مشقیں، بہت وقت، بہت زیادہ خون، پسینہ اور آنسو۔ لیکن ہمیں یقین ہے کہ ہم ایک ٹیم کے طور پر مل کر اس سے گزر یں گے “۔
افغانستان کے کپتان نصیر خان 2022 سے آگے جانا چاہتے ہیں: “پچھلے انڈر 19 نے بہت اچھا کھیلا۔ وہ ایک دلچسپ ٹیم تھے۔ ہم مزید آگے جانا چاہتے ہیں، فائنل کھیلنا اور بہتر کرنا چاہتے ہیں۔‘‘
اسکاٹ لینڈ کے کپتان اوون گولڈ نے اسکواڈ کی تشکیل کے بارے میں کہا: “اہم چیز جس پر میں نے توجہ مرکوز کی ہے وہ ہے اسکواڈ کا ایک اچھا ماحول بنانا۔ میں اسے کرکٹ کی صلاحیتوں سے زیادہ ترجیح دیتا ہوں۔ ٹورنامنٹ سے پہلے اور اس کے دوران بہت ساری ٹیم بانڈنگ۔ اگر ہم پچ سے اچھے ہیں تو اس کے اچھے نتائج برآمد ہوتے ہیں۔
نیوزی لینڈ کے کپتان آسکر جیکسن نے ٹیم کی قیادت کرنے پر کہا: “اس ٹیم کی کپتانی کرنا کچھ خاص ہے۔ بہت فخر کرنے کے لئے کچھ اور کرنا اعزاز کی بات ہے۔ مجھے لگتا ہے کہ ہمارے پاس لڑکوں کا ایک بہت بڑا گروپ ہے، جو میری نوکری کو سپر بناتا ہے، میں بہت خوش قسمت ہوں۔ حقیقی استحقاق اور میں موقع کے لئے شکر گزار ہوں۔
نیپال کے کپتان دیو کھنال کو وطن واپسی کی حمایت پر: نیپال میں کرکٹ کا جنون ہر کوئی جانتا ہے۔ نیپال میں ہمارے مداحوں کی بڑی تعداد ہے اور ان کی وجہ سے ہم ہمیشہ حوصلہ افزائی کرتے ہیں۔ جنون بے مثال ہے۔ ہم بحیثیت کھلاڑی میچ جیت کر انہیں خوشی دینا چاہتے ہیں۔

دیگر خبریں

Trending